<مکتوب خادم>

السلام علیکم ورحمةالله وبرکاته..

اللہ تعالی کا شکر..آج چاند رات ہے..نیا اسلامی، ہجری، قمری مہینہ..ربیع الاول..اللہ تعالی کے حکم سے تشریف لے آیا ہے..

والسلام

خادم..

          لااله الاالله محمد رسول الله

 

<مکتوب خادم>

السلام علیکم ورحمةالله وبرکاته..

اللہ تعالی کی ”غالب نصرت“ ایسی آئی کہ..دوست، دشمن سب حیران رہ گئے..”میڈیا“ کے ایسے ہوش اڑے کہ وہ اپنی اصل ذہنیت بھول گیا اور دھڑا دھڑ سچی خبریں دینے لگا..جب پورے عالم اسلام میں خوشی کی لہر دوڑ گئی..اور امارت اسلامی پورے افغانستان پر چھا گئی تو دشمنوں کو..اور میڈیا کو ہوش آگیا..چنانچہ اب پھر وہی الٹی خبریں، جھوٹے تجزیئے اور سازشی سؤالات ہیں..مثلاً فلاں کیوں نظر نہیں آرہا؟..فلاں منظر عام سے کیوں غائب ہے؟..فلاں اب تک سامنے کیوں نہیں آرہا؟..کیا طالبان میڈیا کے نوکر ہیں کہ دن رات اس کے سامنے حاضری دیں..اور صفائیاں پیش کریں..انہوں نے جہاد لڑکر فتح پائی ہے..کسی سے بھیک مانگ کر نہیں..ان کی قیادت کا ایک حصہ ہمیشہ گمنامی میں رہنا پسند کرتا ہے..اور ان کے سامنے اس وقت بے شمار کام ہیں..مسلمانوں کو چاہیے کہ..جھوٹی اور پریشان کن خبروں کا اثر نہ لیں..امارت اسلامی کی کامیابی کے لئے دعاؤں کا اہتمام کریں..طالبان کو مفت مشورے نہ دیں..اور اس  وقت افغانستان جا کر ان کے مسائل اور پریشانیوں میں اضافہ نہ کریں..یہ فتح اللہ تعالی نے دی ہے..اور ہم سب مسلمانوں کو دی ہے..ہمیں اس پر اللہ تعالی کا ہی شکر ادا کرنا چاہیے..اور اللہ تعالی کے وعدوں پر اپنے یقین کو بڑھانا چاہیے..یہ فتح ان شاءاللہ بہت سی فتوحات کے دروازے کھولے گی اور مظلوم و بے بس مسلمانوں کو آزادی کی نعمت حاصل ہوگی ان شاءاللہ..

والسلام

خادم..

          لااله الاالله محمد رسول الله

 <مکتوب خادم>

السلام علیکم ورحمةالله وبرکاته..

اللہ تعالی ان کو مغفرت و اکرام کا اعلی مقام نصیب فرمائے..فخر کشمیر، شرف کشمیر..مرد مؤمن..مرد استقامت..جرأت و غیرت کا استعارہ، امت مسلمہ کا سرمایہ..محترم سید علی گیلانی..انتقال فرما گئے..انا للّٰہ وانا الیہ راجعون..وہ کشمیر کی آزادی نہ دیکھ سکے..مگر انہوں نے غلامی میں بھی..اپنے دل، اپنے دماغ اور اپنے ضمیر کو آزاد رکھا..اور آخری دم تک اسلام اور آزادی کی آواز لگاتے رہے..لوگ کہہ رہے ہیں کہ آج اہل کشمیر اپنے رہنما سے محروم ہوگئے ہیں..حالانکہ ایسا نہیں ہے..آج تو کشمیری مسلمانوں کو ایک حقیقی رہنما اور ہیرو مل گیا ہے..وہ جو پچھتر سال کے مظالم سے بھی نہ جھکا اور پچانوے سال کی عمر میں..اتنے ظلم اور اتنے تشدد کے باوجود..اپنا ایمان اور اپنا نظریہ سلامت لے گیا..ایسے لوگ ہی نشان منزل ہوتے ہیں..اور ان کے جانے کے بعد قافلے اٹھ کھڑے ہوتے ہیں..سفید داڑھی کے ساتھ  ہندوؤں کا بے ہودہ تشدد سہنے والا بوڑھا سید..جس نے ”سید“ ہونے کی لاج رکھی..جس نے ”علی“ جیسے اونچے نام کی لاج رکھی..جس نے کشمیری ہونے کی لاج رکھی..جاتے جاتے افغانستان میں اسلام کی فتح سن کر گیا..کیا معلوم..اللہ تعالی نے اپنے اس بندے کو..افغانستان کی فتح کے پیچھے چھپی فتوحات کی ایک جھلک دکھا دی ہو..اور ”سید“ نے اسی خوشی میں اپنی جان..اپنے مالک کو پیش کر دی ہو..ہاں..وہ اہل استقامت جو دین کی خاطر آزمائشیں اٹھاتے ہیں ان کا اللہ تعالی سے بہت خاص تعلق بن جاتا ہے..محترم گیلانی صاحب! اللہ تعالی آپ کو امت مسلمہ کی طرف سے بہترین بدلہ..اور جزائے خیر عطاء فرمائیں..کاش آپ کے پر نور جنازے میں شرکت کا موقع ملتا..مگر کہاں؟ اہل استقامت تو مرتے نہیں..موت سے گزر جاتے ہیں.. 

ہرگز نہ میرد آنکہ دلش زندہ شد بعشق،

ثبت است بر جریدۂ عالمِ دوامِ ما..

والسلام

خادم..

          لااله الاالله محمد رسول الله

 

<مکتوب خادم>

السلام علیکم ورحمةالله وبرکاته..

اللہ تعالی کو ”دنیا“ میں کوئی نہیں دیکھ سکتا..مگر خوش نصیب مسلمان ”دنیا“ میں اللہ تعالی کی نصرت دیکھتے ہیں..انہیں اس نصرت میں ”اللہ“ نظر آتا ہے..تب ان کے دل خوشی سے رقص کرتے ہیں..اور ان کی آنکھیں تشکر سے برستی ہیں..

نمی دانم کہ آخر چوں دمِ دیدار می رقصم،

مگر نازم بایں ذوقی کہ پیشِ یار می رقصم..

اللہ، اللہ، اللہ..کابل ایئرپورٹ سے ”امریکہ“ کا آخری ”طیارہ“ اڑ گیا..”انخلا“ مکمل ہوا..”ظالم“ وغاصب واپس اپنے ”بیت الخلاء“ جا بسا..بہت کوشش ہوئی..زبردست سازش ہوئی کہ ”انخلا“ کی تاریخ بڑھا دی جائے..مگر..اللہ والے درویش مجاہد بالکل نہ مانے..تب ”نصرت“ کی ہوا چلی..اور وہ ہو گیا کہ آج ہر مؤمن دل

اللہ اکبر، اللہ اکبر

پکار رہا ہے..وہ جو اپنے بچ کر بھاگ جانے کو کامیابی قرار دے رہے ہیں..انہیں یاد رکھنا چاہیے کہ وہ اکیلے نہیں گئے..ان کے ساتھ ”ذلت“ بھی گئی ہے اور شکست بھی..اور یہ ذلت اور شکست اب گرین کارڈ لے کر امریکہ میں بسے گی..وہاں انڈے بچے دے گی اور یوں وہاں ذلت اور پستی عام ہوجائے گی ان شاءاللہ..”برطانیہ“ سپر پاور تھا..افغانستان سے مار کھا کر نکلا تو اسکی عالمی سلطنت ختم ہو گئی..سویت یونین سپر پاور تھا..افغانستان سے ذلیل ہو کر نکلا تو ٹکڑوں میں بکھر گیا..اور آج کی تاریخ میں زمانے کا ایک اور ”بت“ ذلت اٹھا کر واپس روانہ ہو چکا ہے..اور کابل میں پگڑیوں والے منور طلبہ کرام خوشیاں منا رہے ہیں..

زہے شادی کہ قربانش کنم ہر شادمانی را،

زہے تقویٰ کہ ما با جبّہ و دستار می رقصم..

شکر کا موقع ہے..کس کس کو مبارکباد دیں..اس منزل تک پہنچنے کے لئے قربانیوں کے سمندر..اہل ایمان نے بنائے..سب کو مبارک، سب کو مبارک، پوری امت مسلمہ کو مبارک..

والسلام

خادم..

          لااله الاالله محمد رسول الله

 

<مکتوب خادم>

السلام علیکم ورحمةالله وبرکاته..

اللہ تعالی..”القوی“ ہیں..قوت والے..

1. إِنَّ رَبَّكَ هُوَ الْقَوِيُّ الْعَزِيزُ (ھود 66(

..بے شک تیرا رب وہی ہے قوت والا غالب..

2. وَلَيَنْصُرَنَّ اللّـٰهُ مَنْ يَّنْصُرُهٗ ۗ اِنَّ اللّـٰهَ لَقَوِىٌّ عَزِيْزٌ (الحج 40(

..اللہ تعالی ضرور مدد فرمائیں گے انکی جو مدد کرتے ہیں اللہ تعالی (کے دین) کی..یقینا یقینا اللہ تعالی قوت والے غالب ہیں..

3. أَنَّ الْقُوَّةَ لِلّٰهِ جَمِيعًا وَأَنَّ اللّٰهَ شَدِيدُ الْعَذَابِ(البقرہ 165(

..(کافر اور ظالم جب عذاب دیکھیں گے تو پھر انہیں یقین آجائے گا کہ) بے شک ساری قوت صرف اللہ تعالی ہی کے پاس ہے اور اللہ تعالی سخت عذاب دینے والا ہے..

4. اِنَّ اللّٰهَ هُوَ الرَّزَّاقُ ذُو الْقُوَّةِ الْمَتِیْنُ (الذاریات 58(

..بے شک اللہ تعالی ہی رزق دینے والے، بہت قوت اور قدرت والے ہیں..

5. مَا قَدَرُوا اللّٰهَ حَقَّ قَدْرِهٖ ۗ إِنَّ اللّٰهَ لَقَوِيٌّ عَزِيزٌ (الحج 74(..

6. اَللّٰهُ لَطِیْفٌۢ بِعِبَادِهٖ یَرْزُقُ مَنْ یَّشَآءُ وَ هُوَ الْقَوِیُّ الْعَزِیْزُ (الشوری 19(..

7. أَوَلَمْ يَرَوْا أَنَّ اللّٰهَ الَّذِيْ خَلَقَهُمْ هُوَ أَشَدُّ مِنْهُمْ قُوَّةً (حٰم سجده 15(

..اللہ تعالی ”قوت“ والے..اور قوت عطاء فرمانے والے..

1. ماشاءاللہ لا قوۃ الا باللہ..

2. لا حول ولا قوۃ الا باللہ..

ان دو دعاؤں میں قوت کے خزانے پوشیدہ ہیں..اللہ تعالی کی صفت ”القوی“ سے روشنی اور فیض حاصل کریں..اور اللہ تعالی ہی کے لئے قوت کا اقرار کر کے..اللہ تعالی سے قوت مانگیں..پھر اس قوت کو اللہ تعالی ہی کے لئے خرچ کر کے..زمین کو..ایمان و امن سے..اور اپنے نامہ اعمال کو..حسنات اور فتوحات سے بھرلیں..

والسلام

خادم..

          لااله الاالله محمد رسول الله

 

<مکتوب خادم>

السلام علیکم ورحمةالله وبرکاته..

اللہ تعالی ہم سب مسلمانوں کو..اپنے پورے دین پر عمل کے لئے..قوت و طاقت عطاء فرمائیں..قرآن مجید میں ”قوت“ کا مضمون بہت تفصیل سے بیان ہوا ہے..خود لفظ ”قوت“ اپنے مختلف صیغوں کے ساتھ قرآن مجید میں بیالیس (42) بار آیا ہے..سمجھایا گیا کہ..قوت کا مالک اللہ تعالی ہے..اللہ تعالیٰ کی قوت اور قدرت حقیقی ہے..باقی جس کے پاس جو قوت بھی ہے وہ اللہ تعالی کی عطاء فرمودہ ہے..اللہ تعالی قوت عطاء فرمائیں تو اسے صحیح استعمال کرنے والے..بڑے بڑے مقامات پاتے ہیں..یہ سمجھانے کے لئے حضرت موسی علیہ الصلاة والسلام کا قصہ سنایا گیا..حضرت طالوت رضی اللہ عنہ کا واقعہ سنایا گیا..حضرت ذوالقرنین رضی اللہ عنہ کے کارنامے سنائے گئے..حضرت آقا مدنی صلی اللہ علیہ وسلم کی ہجرت اور جہاد کے قصے بیان فرمائے گئے..حمراء الاسد کے غازیوں کا حال سنایا گیا..مگر اللہ تعالی کسی کو قوت دیں..اور وہ اس کا غلط استعمال کرے تو اس کا انجام بہت خراب اور خوفناک ہوتا ہے..اس کے لئے فرعون کا تذکرہ بار بار سنایا گیا..قوم عاد کا قصہ بیان ہوا..قارون، ھامان اور ثمود کے واقعات بیان ہوئے..ایک مسلمان منافق..کیوں ہوتا ہے؟بتایا گیا کہ وہ کافروں کی قوت اور ترقی دیکھ کر..دب جاتا ہے، جھک جاتا ہے اور کفار کے دامن تلے آنے میں اپنی عزت اور بقا سمجھتا ہے..اس کے لئے قرآن مجید نے جگہ جگہ..اللہ تعالی کی قوت کا تذکرہ اٹھایا ہے..تاکہ ایمان والے کبھی بھی..غیر اللہ کی عارضی اور فانی قوت سے مرعوب نہ ہوں..الغرض ”قوت“ کا موضوع قرآن مجید کے تیس پاروں میں موجود ہے..اور یہ بہت ”میٹھا موضوع“ ہے..اسی سے فیض حاصل کر کے ”مسلمان“ طویل عرصے تک..دنیا کی سب سے ”بڑی طاقت“ رہے ہیں..قرآنی فیض کے دروازے آج کے مسلمانوں کے لئے بھی کھلے ہیں..جو چاہے حاصل کرلے..

والسلام

خادم..

          لااله الاالله محمد رسول الله

 

<مکتوب خادم>

السلام علیکم ورحمةالله وبرکاته..

اللہ تعالی ہمارے ایمان، اعمال اور لمحات میں برکت عطاء فرمائیں..محرم الحرام 1443ھ کا چاند نظر آگیا ہے..نئے سال، نئے مہینے اور نئے لمحات کا آغاز ہے..چاند رات کے اعمال یاد رہیں..

والسلام

خادم..

لااله الاالله محمد رسول الله